کرکٹ کی تاریخ میں گراؤنڈ میں ہونے والے چند ایسے غیر مہذب واقعات جن کو کیمرے کی آنکھ نے محفوظ کر لیا

کائنات نیوز! کرکٹ کو  گیم کہا جاتا ہے لیکن بعض دفعہ کرکٹ میں ایسے بے حیا اور شرمناک لوگ سامنے آجاتے ہیں جنکی حرکتوں پہ نا صرف بہت زیادہ تنقید ہوتی ہے بلکہ اسکے کرکٹ کے معیار سے گری ہوئی حرکتیں بھی کہاجاتا ہے۔ آج کی اس ویڈیو میں ہم آپکو کچھ ایسی ہی حرکتیں دکھائیں گے جنہیں کرکٹ کے شرمناک لمحات میں سے ایک ماناجاتا ہے۔

کرکٹ تقریباً اب دُنیا کے ہر کونے میں دیکھی جاتی ہے اور اس کو ممکن بنانے کیلئے کیمرہ کی بہت اہمیت ہے اسی لیے گراؤنڈ میں تقریباً ۳۵ سے ۳۶ کیمرے لگائے جاتے ہیں جو ہروقت کوئی نا کوئی کسی نا کسی پہ فوکس کیے بیٹھے ہوتے ہیں۔ ساؤتھ افریقہ اور ویسٹ انڈیز کے درمیان ایسے ہی ایک میچ میں کیمرہ مین شائقین میں بیٹھی دوخواتین پہ فوکس کیے ہوئے تھا کہ ان میں سے ایک خاتون نے اپنے کپڑے اُٹھا دئیے اور جسم دکھانے لگی۔ جیسے ہی کیمرہ میں نے یہ حرکت دیکھی اس نے فوراً کیمرہ دوسری جانب موڑ لیا۔ لیکن کرکٹ جیسے کھیل میں ایسی بے ہودہ حرکت کرنا نہایت نامناسب سمجھا جاتا ہے۔ کہاجاتا ہے کہ آسٹریلیا، انگلینڈ، ساؤتھ افریقہ اور نیوزی لینڈ میں ہونے والے تقریباً ہر میچ کے دوران لوگ عجیب و غریب حرکتیں کرتے ہوئے پائے جاتے ہیں۔ ایسا ہی ایک لمحہ آسٹریلیا کرکٹ کے ایک ڈومیسٹک میچ کے دوران دیکھنے کو ملا جب کیمرہ مین نے Chris Lynn پہ فوکس کیا ہوتا تھا کیونکہ انکا انٹرویو ہورہا تھا کہا اچانک پیچھے بیٹھی خاتون نے ایسے اشارے کرنے شروع کردئیے کہ تقریباً ہرکوئی حیران رہ گیا۔ یہاں تک کہ لین نے جب بڑی سکرین پہ دیکھا تو وہ بھی پیچھے مُڑ کر خاتون کو دیکھے بغیر نارہ سکے۔1980 کی دہائی میں انٹرنیٹ نا ہونے کے باوجود لوگ مشہور ہونے کیلئے ایسی ایسی حرکتیں کرتے تھے کہ اگروہ آج کے دور میں ہوں تو تب بھی نہایت شرمناک ہی سمجھی جائیں گی۔ 1980 میں کرکٹ کے ایک میچ کے دوران ایک لڑکی بنا کسی کپڑوں کے گراؤنڈ میں داخل ہوئی اور مختلف جگہوں پہ بھاگتی رہی۔

ایمپائرز، گراؤنڈ سٹاف اور کھلاڑیوں نے لڑکی کو پکڑ کر اس پہ کپڑے ڈالے اور گراؤنڈ سے باہربھیج دیا۔ حیرت کی بات یہ ہے اس قدر شرمناک حرکت کرنے کے بعد یہ خاتون مسکراتی رہی اور بعد میں بہت سارے انٹرویوز بھی دے ڈٓالے۔اگرشائقین کی جانب سے کوئی ایسی ویسی حرکت دیکھنے کو ملے تو پھر بھی سمجھنا ممکن ہے لیکن اگر کوئی کرکٹ ٹیم ہی، بلکہ اگرکرکٹ کے کھیل کی بانی ٹیم ہی ایسی حرکت کردے تو اس سے بدتراور کیا بات ہوگی۔ 2013 کے ایشیز میں انگلینڈ کرکٹ ٹیم جیت کے بعد اس قدر آپے سے باہر ہوئی کہ انہوں نے رات کے وقت اوول کی پچ پہ ہی پیشاب کردیا۔ ڈیلی میل کے مطابق پیشاب کرنے والے کھلاڑیوں میں کیون پیٹرسن، جیمزاینڈرسن اور سٹورٹ براڈ شامل تھے۔ اس سے زیادہ شرمندگی والا لمحہ اور کیا ہوسکتا ہے کہ انگلینڈ کی کرکٹ تیم جس نے کرکٹ کے کھیل کو ایجاد کیا انہوں نے ہی کرکٹ کے کھیل کو بدنام کرنے میں کوئی کثر نا چھوڑی۔دوستو تمام مناظرایسے ہیں جنکو کرکٹ میں دوبارہ کبھی نہیں ہونا چاہئیے۔ شائقین کرکٹ کو کھیل کا احترام کرنا چاہئیے جبکہ کھلاڑیوں اس قدر مہذب ہونا چاہئیے کہ کبھی کسی فین بھی ایسی کوشش کرنے کی ہمت نا پڑے۔ آپکے خیال میں آئی سی سی کو اس سے نبٹنے کیلئے کوئی قانون بنانا چاہئیے؟

اپنی رائے کا اظہار کریں

error: Content is protected !!