پیر جماعت علی شاہ نے کیوں کہا کہ میں قسم کھا کر کہتا ہوں کہ قائد اعظم اللہ کے ولی ہیں

کائنات نیوز! ایک بار کا زکر ہے کہ. حضرت پیر جماعت علی شاہ صاحب نے قائدِاعظم محمد علی جناح کو تین چیزیں تُحفے میں بھجوائیں. ان میں پہلی چیز قرآن کریم دوسری جائےِ نماز اور تیسری تسبیح تھی.قائدِ اعظم نے یہ تینوں چیزیں پورے ادب و احترام کے ساتھ قبول فرمائیں. اور پیر حضرت جماعت علی شاہ صاحب رحمتہ اللہ علیہ کو جواباً خط تحریر فرمایا.

جو کچھ یوں تھا.پیر صاحب میں آپکا ممنون و مشکور ہوں کہ آپ نے مجھے یہ گرانقدر اشیاء تحفے میں بھجوائیں. اور میں یہ بھی جانتا ہوں کہ آپکا ان اشیاء کو بھجوانے کا مقصد کیا ہے.آپ نے مجھے قرآنِ کریم بھجوایا . تاکہ میں اسکو پڑھوں. اس پر غور و فکر کروں. تاکہ میں اللہ تعالیٰ کے احکامات کو سمجھوں. اور انکی بجاآوری کا اہتمام کروں.آپ نے مجھے جائے نماز بھجوائ تاکہ میں نماز قائم کروں . اور اللہ کی اطاعت کروں. کیونکہ جو اللہ کی اطاعت نہیں کرتا. اُس کی قوم بھی اُس کی اطاعت نہیں کرتی. آپ نے مجھے تسبیح بھجوائ ہے. تاکہ میں اِس پر درود شریف کا ورد کرسکوں. تاکہ مجھ پر اللہ تعالی کی رحمتیں و برکتیں رسول پاک صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے طفیل نازل ہوں.یہ تحریر لکھ کر قائدِ اعظم نے حضرت پیر جماعت علی شاہ صاحب کو بھجوادیا.اور جب قائد اعظم کا یہ خط جناب پیر جماعت علی شاہ صاحب کے روبرو پہنچا. اور انھوں نے اسکو پڑھا. تو پیر جماعت علی شاہ حیران و ششدر رہ گئے. اور آپ نے برملا کہا.” میں اللہ کی قسم کھاکر کہتا ہوں کہ قائد اعظم اللہ تعالیٰ کے ولی ہیں. کیونکہ میں ہی یہ جانتا تھا. کہ میں نے قائد اعظم کو یہ تینوں چیزیں کس مقصد کے تحت بھیجی ہیں. اور قائد اعظم نے ان تینوں چیزوں کو قبول کرکے میرے دل کی بات بھی حرف بہ حرف مجھکو بتادی ہے

لڑکیوں کو کس عمر کے لڑکے زیادہ پسند آتے ہیں؟تحقیق نے تمام دعوے غلط ثابت کر دئیے

اپنی رائے کا اظہار کریں

error: Content is protected !!