کہانی میں نیا موڑ، ڈاکٹر ماہا علی کی خود کو ختم کرنے کا ڈراپ سین ، ابتدائی پوسٹ مارٹم رپورٹ نے تہلکہ مچا دیا

ماہا علی

اسلام آباد (کائنات نیوز) گزشتہ دنوں پاکستان میں دو خواتین نے خود کی جن کی وجوہات تو تحقیقات کے بعد سامنے آئیں گی تاہم خودکو ختم کرنا بذات خو دایک افسوسناک امر ہے تاہم پاکستان میں اسکی شرح بڑھتی جارہی ہے ۔کراچی میں خودکو ختم کرنے والی فیشن بلاگر ڈاکٹر ماہا علی کی پوسٹ مارٹم رپورٹ سامنے آ گئی ہے۔ابتدائی پوسٹ مارٹم رپورٹ کے مطابق نائن ایم ایم پستول سے گولی قریب سے چلائی گئی،

میگزین میں 3 گولیاں تھیں جن میں سے ایک چلی ہے۔پولیس کا کہنا تھا کہ خود کو ختم کرنے میں استعمال ہونے والا اسلحہ تحویل میں لے لیا گیا ہے جس کے متعلق معلومت لی جا رہی ہیں۔ اہلخانہ کا کہنا ہے کہ اسلحہ ڈاکٹر ماہا کا نہیں،ڈاکٹر کے دوستوں سے بھی معلومات لی جا رہی ہیں اور موبائل فون کا ڈیٹا بھی لیا جائے گا۔تاہم ڈاکٹر ماہا علی نے کس کے پستول سے اپنی جان لی،یہ معمہ تاحال حل نہیں ہو سکا۔پولیس نے پستول کی ملکیت معلوم کرنے کے لیے سپیشل برانچ کو خط لکھ دیا ہے۔ اہلخانہ تدفین کے لیے میر پور خاص گئے ہیں تاہم واقعے کا مقدمہ تاحال درج نہیں ہو سکا ہے۔ پولیس کا کہنا ہے کہ اس حوالے سے مختلف پہلوؤں سے تحقیقات کی جا رہی ہیں،پستول کو فرانزک کے لیے بھیجا گیا ہے جب کہ سیریل نمبر کو بھی برانچ میں بھیجا گیا ہے تاکہ اس کی ملکیت معلوم کی جا سکے۔اور بعدازاں اس کو بھی شامل تفتیش کیاجا سکے۔پولیس نے ڈاکٹر ماہا علی کے قریبی ساتھیوں کے بیانات بھی ریکارڈ کیے ہیں جس سے اہم پیش رفت ممکن ہے۔ پولیس کے مطابق اگر واقعہ قتل کا ہوا تو مقدمہ درج کیا جائے گا۔ خیال رہے کہ گذشتہ روز فیشن بلاگر ڈاکٹر ماہا شاہ نے خود کشی کر لی۔ 23سالہ فیشن بلاگر و ڈاکٹر ماہا شاہ نے گولی مار کر خود کشی کر لی تھی۔ بتایاگیا کہ انہوں نے خود کو اپنے کمرے کے واش روم میں بند کر کے خود کو گولی مار لی تاہم خود کشی کی وجہ تاحال سامنے نہیں آئی ہے۔پولیس کا کہنا ہے کہ ڈاکٹر ماہا علی کے سر میں پیچھے سے گولی لگی ہے۔

جب کہ خودکشی کرنے والے ماتھے یا کن پٹی میں گولی مارتے ہیں جس وجہ سے مختلف پہلوؤں سے اس معاملے کا جائزہ لیا جائے گا

مزید پڑھیں ! ایک آدمی نے خواب میں دیکھا کہ خدا اس کو کہتاہے کہ باہر جو پتھر پڑا ہے اس پہ خوب جان لگاؤ

اپنی رائے کا اظہار کریں

error: Content is protected !!