لاہور میئر آفس سائلین میں گھرے بیٹھے تھے ۔ایک کونسلر نے ان کے سامنے ایک درخواست رکھی

میئر آفس

اسلام آباد (کائنات نیوز)  بیوروکریسی میں اورموجودہ سیاست میں بدعنوانی، کرپشن اوربددیانتی کے کئی امام ہیں۔ بے شمار مسٹر 10 پرسنٹ ہیں۔ جس معاشرے میں لفظ مسیحا قصاب کے مترادف ہوجائے۔میں جب سینئر سیاست دانوں کو بلاول زرداری کی پریس کانفرنس میں ہاتھ باندھے کھڑے دیکھتا ہوں اور ایان علی کے کیس میں پیش ہوتے دیکھتا ہوں تو کتابوں میں لکھا

سب کچھ غلط نظر آنے لگتا ہے۔یہ عظیم لوگ ہیں جو عمر کے اس حصے میں بھی سچ بولنا افورڈ نہیں کرسکتے۔ یہ بات غلط ہے کہ آپ نوازشریف یا زرداری کو ہی محض کرپشن کا ذمہ دار سمجھیں۔میں آپ کو ایک واقعہ سناتا ہوں میں خود اس کا چشم دید گواہ ہوں۔ ! لاہور میئر آفس سائلین میں گھرے ہوئے ان کی ناک پر ریڈنگ گلاسز لگے ہوئے تھے۔ شاہدرہ کے ایک کونسلر نے ان کے سامنے درخواست رکھی جو کسی بھنگی کے ٹرانسفر سے متعلق تھی۔ میئر نے بڑی نرمی سے کہا کہ تبادلوں پر پابندی لگی ہوئی۔ شاہدرہ کے کونسلر نے درخواست واپس کھینچ لی اور بڑے تلخ لہجے میں کہا کہ میاں صاحب جب اگلا الیکشن ہوگا اور آپ ووٹ لینے آئیں گے تو پھر دیکھیں گے۔ میئر صاحب نے درخواست کونسلر سے واپس لی اور ایک لفظ کہے بنا اس کاغذ پر دستخط کردیئے۔ اس وقت جو بے بسی میئر صاحب کی آنکھوں میں تھی ویسی بے بسی اور بے کسی مجھے دوبارہ دیکھنے کا اتفاق نہیں ہوا۔

مزید پڑھیں! ایک نوجوان سیدزادی لڑکی کی محبت کی حیران کر دینے والی داستان

اپنی رائے کا اظہار کریں

error: Content is protected !!