آپ کو خواب کیوں آتے ہیں اور اگر نہ آئیں تو اس کا مطلب کیا ہے ؟جانیں اس خبر میں

کائنات نیوز! زمین کے انتہائی شمالی حصے میں موسم گرما میں دن انتہائی لمبا ہو جاتا ہے اور رات بے حد سکڑ جاتی ہے۔ یہاں کے مقامی افراد سے پوچھیے کہ نیند فطرت کی کس نعمت کا نام ہے۔کچھ لوگ دعویٰ کرتے ہیں کہ وہ فقط چار یا پانچ گھنٹے سو جائیں، تو مکمل طور پر فٹ ہوتے ہیں اور نئے دن کے معمولات سے نمٹنے کے لیے مستعد اور تیار ہو جاتے ہیں۔ مگر محققین کے مطابق صحت کے اعتبار سے یہ ایک فضول بات ہے۔ ہمارے جسم کو افعال کی انجام دہی کے لیے توانائی جمع کرنے میں کہیں زیادہ وقت درکار ہوتا ہے

۔ہم سوتے کیوں ہیں؟ایک اوسط انسان اپنی عمر کا قریب ایک تہائی حصہ سو کر گزارتا ہے۔ کیا یہ وقت کا ضیاع ہے؟ بات اس کے برعکس ہے۔ آپ نے شاید غور نہ کیا ہوا مگر یہ نیند ہی ہے کہ انسان افعال انجام دے سکتے ہیں۔گہری نیند، آنکھوں کی تیز حرکات یا ریم، نیند کے یہ ادوار ہر نوے منٹ میں اپنا احیا کرتے ہیں۔ گہری نیند میں ہمارا جسم کسی کمپیوٹر کی طرح پس پردہ بہت سی ’اپ ڈیٹس‘ کرتا ہے۔ جسم ایسے میں ہارمونز پیدا کرتا ہے، جو مدافعاتی نظام کی درستی اور تحریک کا کام سرانجام دیں، تاکہ دفاعی خلیات وائرسز اور بیکٹیریا سے لڑ سکیں۔ اسی لیے آپ گہری نیند سوتے ہیں۔برطانوی جریدے اسپورٹس اینڈ میڈیسن کی ایک رپورٹ کے مطابق ایک گھنٹہ ٹی وی دیکھنے سے آپ کی زندگی سے 22 منٹ کم ہو جاتے ہیں یعنی اگر آپ اوسطاً ہر روز چھ گھنٹے ٹی وی دیکھتے ہیں، تو آپ کی زندگی سے پانچ سال کم ہو سکتے ہیں۔ ریم سلیپ میں دماغ دن بھر انجام دیے گئے افعال کا دوبارہ جائزہ لیتا ہے اور ان کو بہتر طریقے سے انجام دینے کی حکمتِ عملی طے کر کے انہیں ’مختصر دورانیے والی یادداشت‘ میں رکھ چھوڑتا ہے۔ مگر ایسا بھی ممکن ہے کہ آپ کو آنے والے خواب مکمل طور پر بے ربط ہوں اور ان کا آپ کی نجی زندگی سے کوئی تعلق ہی نہ ہو۔نیند کتنی ہونا چاہیے، اس کے حوالے سے امریکی نینشل سلیپ فاؤنڈیشن کا کہنا ہے

کہ کسی نومولود بچے کو 14 تا 17 گھنٹے یومیہ سونا چاہیے (تاہم یہ بات واضح ہے کہ کوئی بچے 14 گھنٹے سے زائد ایک ہی تسلسل میں سو نہیں سکتا)۔ صبح آنکھ نہ کھلنے کی سب سے بڑی وجہ ہوتی ہے، نیند کا پورا نہ ہونا۔ ایک اچھی صبح کا آغاز رات کی تیاری پر منحصر ہے۔ اگر آپ بستر میں جاتے ہی نیند کی وادیوں میں چلے جانا چاہتےہیں تو فون، ٹیبلٹ یا دیگر الیکٹرانک ڈیوائسز کو اپنے ساتھ بستر میں لے کر نہ جائیں۔اس فاؤنڈیشن کے مطابق پرائمری اسکول کی عمر کے بچوں کو نو سے گیارہ گھنٹے روزانہ سونا چاہیے، جب کہ ان سے بڑے بچوں کو سات تو نو گھنٹے نیند لینا چاہیے۔ اس فاؤنڈیشن کے مطابق بالغ افراد کو ہرشب کم از کم چھ گھنٹے ضروری سونا چاہیے۔اس فاؤنڈیشن کا تاہم یہ بھی کہنا ہے کہ دس گھنٹوں سے زائد سونا صحت کے لیے نقصان دہ بھی ہے۔ کیمبرج یونیوسٹی کی ایک رپورٹ میں کہا گیا تھا کہ آٹھ گھنٹوں سے زائد سونے والے افراد میں اسٹروک کے خطرات میں اضافہ ہو جاتا ہے۔

62سالہ سیاستدان نے اپنی 63سالہ بیگم کو طلاق دے کر 19سال کی نوجوان لڑکی سے شادی رچالی

اپنی رائے کا اظہار کریں