انتہائی مشہور و معروف علاقے سے 6سروں والی قبر دریافت، دنیا بھر کے ماہرین ہکا بکا کیونکہ یہ قبر

کائنات نیوز! انتہائی مشہور و معروف علاقے سے 6سروں والی قبر دریافت، دنیا بھر کے ماہرین ہکا بکا کیونکہ یہ قبر ۔۔۔!سکاٹ لینڈ ہائی لینڈ کے علاقے میں قرون وسطیٰ کے زمانے کی ایک قبر دریافت ہوئی ہے ،جس میں چیف کے ساتھ مزید پانچ کھوپڑیاں بھی ملی ہیں ۔ثقافتی ماہرین نے قبر کو ”چھ سروں والا چیف ‘‘(Six Headed Chief) کا ٹائٹل دیا ہے۔ماہرین تذبذب کا شکار تھے کہ ایک آدمی کے ساتھ دفن ہونے والے پانچ دوسرے افراد کون ہیں ،

اور کیوں دفن کئے گئے تھے؟یا اگر صرف سر دفن کئے گئے تو یہ کنلوگوں کے تھے؟ ابتدا ئی طور پر کہا گیا تھا کہ یہ کسی اہم رہنما کی قبر ہے ،جس کے لئے مزید افراد کودفنادیا گیاتھا۔یہ بھی کہا گیا کہ انہیں کسی جادو کی غرض سے ہلاک کیا گیا تھا ، تاکہ کھوپڑی وغیرہ سے کوئی جادوئی کام لیا جا سکے۔پھر بھی یہ سوال اپنی جگہ قائم تھا کہ انہیں ایک ہی قبر میں دفن کرنا کیوں پسند کیا گیا۔اب سائنس دانوں نے تصدیق کرتے ہوئے کہا ہے کہ ” یہ تمام افراد قدیم برٹش راہبوں سے تعلق رکھتے تھے۔ان میںسے کچھ کو مار کر یہاں لایا گیا تھا۔انہیں پہلے پہل کہیں اور دفنایا گیا تھا ، بعد میں سب کے لئے ایک ہی قبر بنا دی گئی۔ نئی تحقیق کے مطابق ، ایک کھوپڑی 8ویں اور 10ویں صدی کے درمیان میں دفن ہونے والے کی ہے۔جبکہ تیسرا سر13ویں صدی اورچوتھا سر 15ویں صدی کے اوائل میں دفن ہونے والوں کا ہے۔یہ دونوں یا تو آپس میں کزن تھے یا پھر چاچا اور بھتیجا تھے۔دیگر کھوپڑیاں بھی اسی خاندان کے عزیز واقارب کی تھیں۔ باقی ماندہ کھوپڑیاں 15 ویں صدی میں دفن ہونے والے دادا ، ابو اور ماں کی ہو سکتی ہیں۔ سائنس دانوں کا کہنا ہے کہ ڈی این اے رپورٹ کی رشنی کے مطابق ”چیف‘‘ کے ساتھ مرنے والے بھی قریبی رشتے دار تھے۔اسی قبر کے قریب ہی ایک اور کھوپڑی بھی ملی تھی۔یوں کل تعداد سات ہو گئی۔ بریڈ فورڈ یونیورسٹی کی ماہر آثار قدیمہ شرلے کرٹس سمرز (Shirley Curtis-Summers)کاکہنا ہے کہ ”یہاں بات ہی کچھ اور ہے۔ایک آدمی کا قد5فٹ 9انچ ہے ،ڈی این اے کے مطابق اس کے چہرے کے دائیں جانب گہرا گھائو ہے جو کسی تلوار کا لگتا ہے

۔سب سے پہلے دفن ہونے والے دونوں افراد کی گردنیں اڑا دی گئی تھیں۔یہ دونوں افراد طویل القامت اور جنگجو لگتے ہیں کیونکہ ان کی کھوپڑی پر تلوار جیسے گھائو ہیں۔کسی نے تلوار کے وار سے گردن اڑا دی تھی‘‘۔ شرلے کے مطابق ”جیسا کہ پہلے کہا جا تا تھا کہ یہ کسی جادوئی مقصد کی خاطر ہلاک کئے گئے ہیں، لیکن ان علاقوں میں ان سرگرمیوںکے کوئی آثار نہیں ملے۔ان علاقوں میں کھوپڑی کی پرستش کی بھی کوئی روایت نہیں ہے۔ قرین قیاس یہی ہے کہ اس دور میں دو قبائل روسس (Rosses) اورمیکیس (Mackays) آپس میں نبرد آزما تھے،یہ دونوں قبائل ایک دوسرے کے جانی دشمن تھے، ان میںاقتدار کی جنگ جاری رہتی تھی، اس قبر میں دفن ہونے والاایک چیف سرکشی کا نشانہ بن کر ہلاک ہوا۔ 1480ء کی دہائی میں چرچ کی دوبارہ تعمیر کے وقت ان قبروں کاانکشاف ہوا تھا۔جنہیں ابتدائی طور پر ”ٹربٹ ڈسکوری سنٹر‘‘ میں رکھا گیا تھا لیکن اب انہیں عجائب گھر منتقل کر دیا گیا ہے۔

 

اپنی رائے کا اظہار کریں