لاک ڈاون، سڑکوں پر تعینات پولیس اہلکاروں پر پتھراؤ۔ خاتون ایس ایچ او کی ناقابل یقین ویڈیو نے سوشل میڈیا پر کہرام مچا دیا

کراچی(آن لائن نیوز) شہر قائد کے علاقے پیر آباد میں لاک ڈاؤن کے احکامات شہریوں نے ہوا میں اُڑا دئیے، روکنے کی کوشش پر شہریوں نے پولیس پر پتھراؤ کردیا جس کے نتیجے میں خاتون ایس ایچ او زخمی ہوگئیں۔اے آر وائی نیوز کی رپورٹ کے مطابق کراچی کے علاقے پیرآباد میں شہریوں نے اجتماع نہ کرنے کی اجازت دینےے انکار پر پولیس پر پتھراؤ کردیا جس کے نتیجے میں خاتون ایس ایچ او شرافت خان زخمی ہوگئیں۔

دوسری جانب جوڈیشل مجسٹریٹ نے پتھراؤ کا نوٹس لیتے ہوئے رپورٹ فوری طلب کرلی، عدالت نے ایس ایس پی اور ڈی آئی جی ویسٹ کو رپورٹ پیش کرنے کا حکم دے دیا۔جوڈیشل مجسٹریٹ نے کار سرکار میں مداخلت کرنے والوں کے خلاف کارروائی کی ہدایت کردی۔چیئرمین قائمہ کمیٹی برائے داخلہ رحمان ملک نے کراچی میں خاتون ایس ایچ او پر حملے کا نوٹس لیتے ہوئے آئی جی سندھ سے ٹیلیفونک رابطہ کیا اور واقعے کی تفصیلات دریافت کیں۔رحمان ملک نے آئی جی سندھ سے رپورٹ طلب کرکے ذمہ داروں کے خلاف قانونی کارروائی کے احکامات دئیے، سینیٹر رحمان ملک کا کہنا تھا کہ پولیس فورس پر حملہ کرنا پوری قوم پر حملے کے مترادف ہے۔

واضح رہے کہ سندھ حکومت کی جانب سے جمعہ کے روز لاک ڈاؤن میں سختی کی گئی تھی اور دوپہر 12 بجے سے ساڑھے 3 بجے تک گھروں سے غیرضروری باہر نکلنے پر پابندی عائد کی گئی تھی۔جبکہ دوسری جانب ایک خبر کے مطابق آئی جی پنجاب شعیب دستگیر نے اعلان کیا ہے کہ اگر قرنطینہ سینٹرز سے بغیر ٹیسٹ کوئی شخص فرار ہوا تو ڈی پی اور سی پی اوز کو فارغ کر دیا جائے گا۔آئی جی پنجاب کی جانب سے جاری مراسلے میں کہا گیا ہے کہ سخت کارروائی کیلئے سفارشات سٹیبلشمنٹ ڈویژن کو بھجوائی جائیں گی۔ تمام افسران روزانہ کی بنیاد پر رپورٹ آر پی اوز اور آئی جی پنجاب کو بھجوائیں۔

دوسری جانب کورونا وائرس سے سدباب کے لئے پنجاب حکومت نے قومی رابطہ کمیٹی کو لاک ڈان میں ایک ہفتہ مزید توسیع کی سفارش کی ہے۔ حتمی اقدام کا اعلان وفاقی حکومت کی مشاورت اور منظوری سے کیا جائے گا۔خیال رہے کہ پنجاب حکومت مزید ایک ہفتے کے لئے سلیکٹو لاک ڈان کی خواہشمند ہے۔ صوبے میں جزوی لاک ڈان کی مدت 14 اپریل کو ختم ہو رہی ہے۔

یہ بھی پڑھیں! شرم گئی تیل لینے۔ ہانیہ عامر کی ایسی تصاویر سوشل میڈیا پر وائرل ،دیکھنے والوں کا اپنی آنکھوں پریقین کرنا مشکل

اپنی رائے کا اظہار کریں

error: Content is protected !!